19

کورونا وائرس کی وبا کے دوران تکلیف برداشت کرنے والے سیکٹرز کے لیے پیکج کی تجویز منظور، وفاقی وزیرمنصوبہ بندی ترقی واصلاحات وخصوصی اقدامات اسد عمر

وزیر خزانہ نے کورونا وائرس کی وبا کے دوران تکلیف برداشت کرنے والے سیکٹرز کے لیے پیکج کی تجویز منظور کرلی ہے، وفاقی وزیرمنصوبہ بندی ترقی واصلاحات وخصوصی اقدامات اسد عمر کا اسلام آبادچیمبرزآف کامرس میں خطاب
اسلام آباد۔(نمائند خصوصی):وفاقی وزیرمنصوبہ بندی ترقی واصلاحات وخصوصی اقدامات اسد عمر نے کہاہے کہ کورونا وائرس کی وبا کے دوران جن سیکٹرز نے تکلیف برداشت کی ان کے لیے پیکج کی تجویز وزیر خزانہ نے منظور کرلی ہے۔اسلام آبادچیمبرزآف کامرس میں خطاب کرتے ہوئے اسد عمر نے کہا کہ وزارت صنعت کے حکام اس پیکج پرکام کررہے ہیں، قانون کرایہ ایکٹ اپوزیشن کے باعث سینیٹ میں رکا ہوا ہے، کرایہ ایکٹ اسلام آباد کے تاجروں کی دیرینہ خواہش ہے، آئندہ مالی سال کیلئے 4.8فیصدجی ڈی پی گروتھ کی منظوری دے دی گئی۔ان کا کہنا تھا کہ سالانہ منصوبہ بندی رابطہ کمیٹی آئندہ سال کے لیے دیگر اہداف کا جائزہ لے رہی ہے، کوروناوائرس کی پہلی لہر کے دوران بہت زیادہ تنقید ہوئی۔وزیر نے اپنے خطاب میں کہا کہ اسمارٹ لاک ڈائون پر اپوزیشن نے تنقید کی، کہا گیا پاکستان میں روزانہ کی بنیاد پر70ہزار سے زائداموات ہو سکتی ہیں، گزشتہ سال عید کے لیے 2 ہفتوں کیلئے کاروبار کھولے گئے، جب گزشتہ سال 2ہفتے کیلئے کاروبار کھولے گئے تو ہسپتال بھرگئے، بھارت میں کبھی معیشت اتنی نہیں گری جتنا کورونا وائرا کی وبا کے دوران گری۔اسد عمر کا کہنا تھا کہ پاکستان کی بہتری کیلئے اچھی نیت سے فیصلے کررہے ہیں۔اسلام آباد کی 21فیصدآبادی ویکسی نیشن کرواچکی ہے۔انہوں نے مزید کہا کہ این سی اوسی ٹیم چیمبرز اور تاجربرادری کےساتھ میٹنگ کرےگی، عید الاضحیٰ پرامیدکرتاہوں مارکیٹس بندنہ ہوں، ویکسین وافرمقدارمیں ہےاورویکسی نیشن سینٹرقائم کیےجاچکے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان کی بہتری کیلئے اچھی نیت سے فیصلے کر رہے ہیں،جی ڈی پی گروتھ پر ایک طوفان برپا ہوا ہے،واویلا مچایا جا رہا کہ آئی ایم ایف اور دیگر عالمی اداروں نے کم گروتھ کا اندازہ لگایا، اسد عمر نے کہاکہ ہم نہیں چاہتے کہ کاروباروں کو بند کیا جائے یا لاک ڈائون ہو،این سی او سی ٹیم چیمبرز اور تاجربرادری کے ساتھ میٹنگ کرے گی ، انہوں نے کہا کہ چیمبرز میں ویکسی نیشن سنٹر قائم کیا جا سکتا ہے۔انہوں نے کہاکہ ‏ن لیگ کے آخری سال سے زائد ہماری جی ڈی پی گروتھ ہوگی، کورونا وائرس کی پہلی لہر کے دوران بہت زیادہ تنقید ہوئی، اسمارٹ لاک ڈائون پر اپوزیشن نے تنقید کی،لیکن دنیا نے مان لیا کہ پاکستان کی حکومت نے کورونا کے دوران جو اقدامات اٹھا ہے تھے ان کے مثبت اثرات سامنے آ نا شروع ہوگئے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں