52

اردو قومی شناخت، دستور کے مطابق نافذ کی جائے،کینیڈا میں پاکستانیوں کا قتل دہشتگردی، دنیا کو کیوں یہ انتہاء پسندی نظر نہیں آتی؟، ساجد نقوی

اسلام آباد (پناہ ڈیسک) قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی کہتے ہیں اردو زبان صرف قومی زبان نہیں یہ قومی شناخت ہے، دستور میں موجود، سپریم کورٹ کے فیصلے میں موجود، پورے ملک کو آپس میں پروئے ہوئے ہے مگر افسوس اس قومی شناخت کے ساتھ ”ڈنگ ٹپاؤپالیسی“ جیسا سلوک کیا جارہاہے، اردو زبان کا حق تسلیم کرتے ہوئے آئین کے آرٹیکل251 کو فی الفور نافذ کیا جائے، قائد ملت جعفریہ پاکستان کا کینیڈا میں چار پاکستانیوں کی شہادت پر اظہار افسوس، دنیا کو کیو ں یہ انتہاء پسندی و دہشت گردی نظر نہیں آتی؟ قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی نے کہاکہ 2015ء میں اردو زبان کے نفاذ بارے سپریم کورٹ آ ف پاکستان کا تاریخی فیصلہ آیا مگر افسوس جمہور، دستور کی بالادستی کی صرف مالا جپی جاتی ہے عملاً سب کچھ مفادات کی نذر کردیا جاتاہے، یہی حال اس زبان کے ساتھ کیا جارہاہے جو قومی زبان ہونے کے ساتھ ساتھ دنیا میں پاکستان کی شناخت ہے، زبان زندہ قوموں کی پہنچان ہوا کرتی ہے مگر افسوس پاکستان میں قومی شناخت کے ساتھ بھونڈے انداز میں مذاق جاری ہے اور صرف ”ڈنگ ٹپاؤپالیسی“کے تحت ہر کچھ عرصہ بعد معمولی سی بات کردی جاتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ اردو زبان جہاں پورے ملک کو آپس میں پروئے ہوئے یکجہتی کی علامت ہے وہیں قومی شناخت، دستور میں موجود اور سپریم کورٹ کے فیصلے میں موجود ہے۔ اردو کے نفاذ کے حوالے سے آئین کے آرٹیکل 251 پر فی الفور عمل کیا جائے۔ قائد ملت جعفریہ پاکستان علامہ سید ساجد علی نقوی نے کینیڈا میں چار پاکستانیوں کے سانحہ پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہاکہ دنیا کو مغرب میں پھیلتی یہ دہشت گرد ی اور انتہاء پسندی کیوں نظر نہیں آتی؟ کبھی مساجد پر حملے کئے جاتے ہیں، کبھی راہ چلتے لوگوں کو کچل دیا جاتا ہے کیا یہ دہشتگردی کے ذمرے میں نہیں آتا، کسی بھی بے گناہ شخص کو ناحق قتل کرنا ظلم اور دہشت گردی ہے چنانچہ کنیڈین پارلیمنٹ نے بھی اس کو دہشتگردی قرار دیا ہے البتہ دہشتگردی کے اس سانحہ کے وجوہ و اسباب کی تہہ تک پہنچنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے سوگوار خاندان سے اظہار تعزیت کرتے ہوئے اس سانحہ میں زخمی ہونیوالے بچے کی جلد صحت یابی اور جاں بحق ہونیوالے افراد کے لئے مغفرت کی دعا کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں