70

گلگت بلتستان10ملین درخت لگانے کا ہدف مقرر،نصاب تعلیم میں ماحولیاتی تبدیلیوں کا نصاب شامل‘حکومت ماحولیاتی تبدیلیوں کے نقصانات سے بچنے کیلئے پرعزم ہے‘مقامی ایکوسسٹم کے تحفظ کو یقینی بنایا جائیگا‘ خالد خورشید خان

گلگت/اسلام آباد(نمائندہ خصوصی)وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان خالد خورشید سے وزیر اعظم کے معاون خصوصی برائے ماحولیاتی تبدیلی ملک امین اسلم کی ملاقات! وزیر اعلیٰ گلگت بلتستان خالد خورشید نے گلگت بلتستان میں خصوصی دلچسپی لینے پر وزیر اعظم کے معاون خصوصی کو خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ گلگت بلتستان کا سالانہ ترقیاتی پروگرام (ADP) تیاری کے مراحل میں ہے تمام صوبائی وزراء کو ہدایت دی ہے کہ جنگلات، شجرکاری، سوشل فارسٹری کے منصوبوں کو اپنے ADPمیں شامل کریں تاکہ ماحولیاتی تبدیلی کے مضر اثرات سے بچا جاسکے۔توانائی کے متبادل ذرائع نہ ہونے کی وجہ سے جنگلات کا کٹاؤ ہوتا ہے جس کو مدنظر رکھتے ہوئے صوبائی حکومت نے متبادل توانائی کے ذرائع متعارف کرانے کیلئے اقدامات کئے ہیں۔ صوبائی وزراء کو متبادل توانائی کے ذرائع فراہم کرنے کیلئے متعلقہ حلقوں میں مائیکرو ہائیڈرل کے منصوبے اے ڈی پی میں شامل کرنے کیلئے کہا گیا ہے تاکہ جنگلات کے کٹاؤ کو روکا جاسکے۔ حکومت گلگت بلتستان ماحولیاتی تبدیلیوں کے نقصانات سے بچنے کیلئے پرعزم ہے اور عملی اقدامات کررہی ہے۔صوبے میں ایک کروڑ درخت لگانے کا ہدف مقرر کیا ہے۔ مختلف سطح پر آگاہی پروگرام کئے جارہے ہیں۔ سکولوں کی سطح پر بنیادی نصاب تعلیم میں ماحولیاتی تبدیلیوں کے حوالے سے خصوصی باب نصاب میں شامل کیا جارہاہے تاکہ ابتداء سے ہی ماحولیات کے تحفظ کیلئے بچوں میں آگاہی پیدا کی جاسکے اور معاشرے کا ہر شہری اپنا کردار ادا کرے۔ ملاقات میں کئے گئے اہم فیصلے:- آب پاشی کے نظام کو بہتر بنانے کیلئے جدید ٹیکنالوجی متعارف کرائی جائے گی۔ ماحولیاتی تبدیلیوں کے حوالے سے خصوصی باب بنیادی تعلیمی نصاب میں لازمی شامل کیا جائے گا تاکہ بچوں کو پلاسٹک اور دیگر ماحولیات کے مضر اشیاء کے حوالے سے آگاہی دی جاسکے۔بغیر منصوبہ بندی کے بڑے پیمانے پر کنکریٹ کے تعمیرات سے علاقے کا قدرتی حسن اور ماحولیات پر برے اثرات مرتب ہورہے ہیں جس کو مدنظر رکھتے ہوئے گرین کو ڈز بنائے جائیں گے اور وفاقی وزارت ماحولیاتی تبدیلی کے بنائے گئے گرین کوڈزپر عملدرآمد یقینی بن ایا جائے گا۔چیک ڈیم کے کٹاؤ کی روک تھام کیلئے انتہائی اہم ہیں جس کو مدنظر رکھتے ہوئے وزیر اعلیٰ نے سیکریٹری آب پاشی کو ہدایت کی ہے کہ چیک ڈیم کی تعمیر کیلئے بین الاقوامی ماہرین سے فزیبلٹی تیار کرائی جائے۔ حکومتی لینڈ پر مستقل تعمیرات کی حوصلہ افزائی نہیں کی جائے گی تاکہ مقامی ایکو(ECO)سسٹم کے تحفظ کو یقینی بنایا جاسکے۔ خنجراب نیشنل پارک میں مستقل تعمیرات کی گئی ہے جس کی حوصلہ شکنی کی جائے گی۔ صوبائی سیکریٹری جنگلات کو ہدایت کی گئی ہے کہ خنجراب پاس میں پاکستان گیٹ کی تعمیر کیلئے ماہرین کے تعاون سے ڈیزائن تیار کریں اور محکمہ ماحولیاتی تبدیلی کے ساتھ مشاورت کریں۔ وزیر اعظم پاکستان کے معاون خصوصی برائے ماحولیاتی تبدیلی ملک امین اسلم نے وزیر اعلیٰ کے خصوصی اقدامات کو سراہتے ہوئے ان اقداما ت ماحولیاتی تبدیلیوں سے بچاؤ کیلئے مثالی قرار دیتے ہوئے کہا کہ ماحولیات کے تحفظ کیلئے شمسی توانائی کے بھی منصوبوں پر بھی توجہ دی جائے۔ وفاقی وزارت ماحولیاتی تبدیلی حکومت گلگت بلتستان کیساتھ ہر ممکن تعاون یقینی بنائے گی۔
ملین ٹری

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں