54

جرمنی کے ساتھ پاکستان کے تعلقات مشترکہ جمہوری اقدار اور کثیر الجہتی تعاون پر مبنی ہیں،چوہدری فواد حسین

اسلام آباد(نیوزمارٹ ڈیسک):وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین نے کہا ہے کہ جرمنی کے ساتھ پاکستان کے تعلقات مشترکہ جمہوری اقدار اور کثیر الجہتی تعاون پر مبنی ہیں، پاکستان خطے کے ان ممالک میں شامل ہے جہاں میڈیا کو آزادی حاصل ہے، جرمنی کے فلم ساز اور ڈرامہ پروڈیوسرز پاکستان آئیں اور کیمرے کی آنکھ سے سلسلہ ہمالیہ کی خوبصورتی دریافت کریں۔ یہ بات انہوں نے جرمنی کے سفیر برن ہارڈ سٹیفن شلیگ ہیک سے گفتگو کرتے ہوئے کہی ،جنہوں نے جمعرات کو یہاں وفاقی وزیر اطلاعات سے ملاقات کی۔ وفاقی وزیر چوہدری فواد حسین نے فلم اور ڈرامہ کے شعبوں میں پاکستان اور جرمنی کے درمیان مشترکہ منصوبوں کی ضرورت پر زور دیا۔ انہوں نے فلم اور جوائنٹ پروڈکشن کے شعبوں میں تعاون کو مضبوط بنانے کے لئے جرمنی کی فلم اور ڈرامہ پروڈیوسرز ایسوسی ایشنز کے ساتھ زوم میٹنگ کے انعقاد کی تجویز دی۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان ان پہلے ایشیائی ممالک میں شامل ہے جس نے جرمنی کے ساتھ سفارتی تعلقات قائم کئے۔ انہوں نے کہا کہ علامہ اقبال کی جرمنی کے ساتھ تعلقات اور ہیڈلبرگ کے بارے میں ان کی شاعری کو اجاگر کرنے سے متعلق ویڈیو فلم کے حوالے سے وزارت خارجہ کی تجویز جوائنٹ پروڈکشن اور دستاویزی فلموں کے شعبوں میں تعاون کو تقویت بخشے گی۔ چوہدری فواد حسین نے جرمنی کے سفیر کو میڈیا ٹیکنالوجی یونیورسٹی کے قیام کے حوالے سے حکومت کے اقدامات سے بھی آگاہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ چار سکولوں پر مشتمل جدید ترین تعلیمی ادارے کے قیام میں جرمنی کے تعاون کا خیرمقدم کریں گے۔ وفاقی وزیر اطلاعات نے جرمنی کی گیمنگ اور اینیمیشن کمپنیوں کے ساتھ تعاون کی ضرورت پر بھی زور دیا۔ انہوں نے کہا کہ اس شعبہ میں پاکستان اور جرمنی کے درمیان تعاون سے دونوں ممالک کے درمیان اقتصادی تعلقات کو مزید فروغ حاصل ہوگا۔ جرمنی کے سفیر نے فلم اور ڈرامہ پروڈکشن کے شعبوں میں جوائنٹ وینچرز کی تجویز کو سراہتے ہوئے کہا کہ اس سے سیاحت کے فروغ کے ساتھ ساتھ علاقے کی خوبصورتی کو فروغ دینے میں مدد ملے گی۔ انہوں نے گیمنگ کے شعبہ میں تعاون کو آگے بڑھانے میں بھی دلچسپی کا اظہار کیا۔ جرمن سفیر نے جرنلسٹس پروٹیکشن بل کو حتمی شکل دینے کے لئے موجودہ جمہوری حکومت کی کاوشوں کو سراہا۔ ملاقات کے دوران پاکستان میں صحافی برادری اور میڈیا کی آزادی کے حوالے سے مختلف امور پر بھی تبادلہ خیال ہوا۔ وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ پاکستان کا میڈیا خطے کا آزاد ترین میڈیا ہے، ہم آزادی اظہار رائے کے بنیادی اور جمہوری حق پر کامل یقین رکھتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت پاکستان میں تقریباً 43 بین الاقوامی چینلز، 112 مقامی پرائیویٹ چینلز، 258 ایف ایم چینلز اور 1569 پرنٹ پبلیکیشنز کام کر رہے ہیں۔ اتنے بڑے پیمانے پر میڈیا کی موجودگی ان لوگوں کے اس دعویٰ کی تردید کرتی ہے جو میڈیا کی آزادی پر قدغن کی شکایت کرتے ہیں۔ انہوں نے اس تاثر کو رد کیا کہ پاکستان میں سوشل میڈیا کی آزادی کو دبانے کے لئے قوانین منظور کئے گئے ہیں۔ وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ نفرت انگیز تقاریر عالمگیر سطح پر تسلیم شدہ حقیقت ہیں جس کی حوصلہ شکنی ہونی چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ تمام ممالک کی ذمہ داری ہے کہ وہ نفرت انگیز تقاریر کی اجازت نہ دیں۔ وفاقی وزیر نے مغرب میں اسلامو فوبیا کے بڑھتے ہوئے رجحان پر اپنی تشویش کا اظہار کیا۔ ملاقات کے دوران دونوں شخصیات نے میڈیا اور اطلاعات کے شعبوں میں تعاون کو مزید فروغ دینے پر تبادلہ خیال کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں