94

ہم انھیں بھاگنے نہیں دیں گے،شہباز شریف جتنی مرضی انگلی لہرا لیں، شہزاد اکبر

اسلام آباد: ( نیوزمارٹ ڈیسک) معاون خصوصی برائے احتساب بیرسٹر شہزاد اکبر نے کہا ہے کہ بہتر ہوگا شہباز شریف لندن بھاگنے کی کوشش نہ کریں، وہ جتنی مرضی انگلی لہرا لیں، ہم انھیں بھاگنے نہیں دیں گے۔

یہ بات انہوں نے وفاقی وزرا فواد چودھری اور حماد اظہر کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہی۔ اپوزیشن لیڈر کے بیان کے ردعمل میں شہزاد اکبر کا کہنا تھا کہ انھیں جب سے لندن نہیں جانے دیا گیا، تب سے ان کی صحت خراب ہے۔ انھیں سوالوں کا جواب دینے کیلئے طلب کیا تھا لیکن لیگی رہنما نے چٹکلا چھوڑا کہ انھیں ایف آئی اے نے ہراساں کیا۔

بیرسٹر شہزاد اکبر نے کہا کہ ماضی میں سیف الرحمان جیسے لوگوں کو استعمال کیا جاتا تھا۔ یہ لوگ جب مایوس ہوں تو اداروں پر حملے شروع کر دیتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ حمزہ شہباز سے ٹرانزیکشن اور منی لانڈرنگ سے متعلقہ سوال کیا گیا تو انہوں نے کہا کہ رضوان صاحب! پہلے بھی کہا تھا وقت ایک جیسا نہیں رہتا۔ لیکن ایف آئی اے کے افسر نے پھر بھی اس دھمکی کے باوجود درگزر کیا۔

معاون خصوصی شہزاد اکبر نے کہا کہ یہ دھمکیاں ان کو وراثت میں ملی ہیں۔ یہ ویڈیو بنا کر ججوں کو بلیک میل کرتے رہے۔ میں فواد چودھری کی تجویز سے اتفاق کرتا ہوں، ان کے کیسز کو لائیو دکھانا چاہیے۔

شہزاد اکبر نے کہا کہ بڑے کیسز کا فیصلہ جلد ہونا چاہیے کیونکہ لوگوں کا نظام انصاف پر اعتماد ہونا ضروری ہے۔

اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے وفاقی وزیر اطلاعات فواد چودھری کا کہنا تھا کہ اندر جو یہ باتیں کرتے ہیں لوگوں کو لائیو پتا چلنا چاہیں۔ ہم چیف جسٹس صاحب سے اپیل کرتے ہیں کہ ہائی پرفائل کیسز کو لائیو چلانے کی اجازت دیں۔ برطانیہ کی سپریم کورٹ میں کیسزلائیو دکھائے جاتے ہیں۔

فواد چودھری نے کہا کہ جو پیسہ پنجاب حکومت کو دیا گیا وہ لندن سے برآمد ہوا۔ ہمیں تو پنامہ سکینڈل کی وجہ سے ان کی پراپرٹیوں کا پتا چلا۔ بڑی جلدی ان کے بیٹوں، نواسوں اور پھوپھیوں کی پراپرٹیاں سامنے آئیں گی۔ پاکستان سے اربوں روپے لوٹ کر برطانیہ بھیجے گئے۔

وفاقی وزیر توانائی حماد اظہر کا اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے کہنا تھا کہ شہباز شریف نے کہا لوڈشیڈنگ دوبارہ واپس آ گئی، لیکن اس وقت لوڈشیڈنگ پیداوار نہیں بلکہ ترسیلی نظام کی وجہ سے ہو رہی ہے۔ تربیلا ڈیم 80 فیصدآپریشنل نہیں تھا۔

حماد اظہر کا کہنا تھا کہ شہباز شریف نے ساہیوال میں امپورٹڈ کوئلے والا پلانٹ لگایا، انھیں کس سائنسدان نے امپورٹڈ کوئلے کا مشورہ دیا تھا؟ سستے معاہدے تھے تو شہبازشریف دور میں 1200 ارب کا گردشی قرضہ کیوں بڑھا؟ شہباز شریف لوگوں کو گمراہ کر رہے ہیں۔ ہم شہباز شریف کی کوتاہیوں کا خمیازہ بھگت رہے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں