38

بھارت میں مقیم غیر ملکی صحافیوں کو پاکستان آنے سے روک کر دنیا کی ”سب سے بڑی جمہوریت“ کا نام نہاد بھارتی دعویٰ ایک بار پھر بے نقاب ہو گیا ہے، چوہدری فواد حسین

اسلام آباد(نیوزمارٹ ڈیسک):وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات چوہدری فواد حسین نے کہا ہے کہ وزیراعظم عمران خان سے ملاقات کے لئے غیر مکی صحافیوں کے واہگہ کے راستے پاکستان آنے پر پابندی کا بھارتی فیصلہ انتہائی افسوسناک اور قابل مذمت ہے، عالمی صحافیوں کو پاکستان آنے سے روک کر دنیا کی ”سب سے بڑی جمہوریت“ کا نام نہاد دعوی ایک بار بے نقاب ہوگیا ہے۔

بدھ کو اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ فارن میڈیا کے نمائندوں کو پاکستان آنے سےروک کر مودی حکومت نے اپنے ان دعووں کی نفی کی ہے جو اس کے وزیر خارجہ نے حال ہی میں اعتدال پسندی، بات چیت اور عالمی قانون کے درس کے طور پر دنیا کے سامنے کئے۔

وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ نئی دہلی میں مقیم نیویارک ٹائمز، رائٹرز اور دی اکنامسٹ کے نمائندوں کو پاکستان آنے سے روکنا بھارت کے اس خوف میں مبتلا ہونے کا واضح ثبوت ہے کہ وہ سچائی کا سامنا نہیں کر سکتا۔

انہوں نے کہا کہ میڈیا کے پیشہ ورانہ امور میں رکاوٹ ڈالنا اور آزادانہ رپورٹنگ کے مسلمہ بین الاقوامی حق سے روکنا 5 اگست 2019ءکے فسطائی، یکطرفہ اور غیر قانونی اقدامات کی انتہاءپسندانہ ذہنیت کا تسلسل ہے جس کے ذریعے عالمی سطح پر تسلیم شدہ تنازعہ اور اقوام متحدہ کی سلامتی کونسل کی قراردادوں کے مطابق غیرقانونی طور پر بھارت کے زیرقبضہ جموں وکشمیر کے عوام کا بنیادی حق استصواب رائے سلب کرنے کی کوشش کی گئی۔

قبل ازیں اپنے ایک ٹویٹ میں وفاقی وزیر اطلاعات نےکہا کہ ان غیر ملکی صحافیوں نے 5 اگست کو آزاد کشمیر کے اسمبلی اجلاس میں شرکت کرنا تھی، ہم چاہتے ہیں کہ بھارت تمام خودمختار صحافیوں کو بھارتی مقبوضہ کشمیر میں جانے اور حقائق رپورٹ کرنے کی اجازت دے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں