27

ثقافتی ورثے کو فن کی زبان میں پیش کرنے والی سعودی آرٹسٹ سے ملیے

ریاض (نیوزمارٹ ڈیسک)سعودی عرب کی ایک نوجوان آرٹسٹ خلود نوار نے ورثے کی زبان میں ماحولیاتی مواد کا استعمال کرتے ہوئے دروازوں اور کھڑکیوں کو فن پاروں میں تبدیل کیا۔نوار نے اپنے کاموں میں ورثے کی محبت کے لیے اپنا اثر و رسوخ وقف کیا، جسے انہوں نے پینٹنگز تک پہنچایا اور سعودی ورثے کے رنگوں کی خوبصورتی ،اپنے فن پاروں اور مجسموں میں “نوادرات” کو اجاگر کیا۔ایک سوال کے جواب میں نوار نے کہا کہ اس کے کام کی سب سے اہم خصوصیت تفصیلات کی درستگی اور موضوعات کا تنوع ہے۔ جدہ شہر کے البلاد علاقے میں روایتی حجازی مکانات کے ماڈل بنانے سے لے کر اور ورثے کے دروازوں کو بھی اس نے آرٹ کے نمونوں میں پیش کیا اور ایسی نوادرات جنہیں ماضی میں روز مرہ زندگی میں استعمال کیا جاتا رہا ہے اس کے آرٹ ورک میں شامل ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں