51

پاکستان کسی دباؤ پر چین سے تعلقات تبدیل نہیں کریگا: وزیراعظم عمران خان کا ایک بار پھر دوٹوک پیغام

اسلام آباد(نیوزمارٹ ڈیسک) وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ پاکستان پر جتنا بھی دباو آئے گا ہم چین کے ساتھ تعلقات کو کبھی کم نہیں کریں گے اور چینی نظام حکومت کسی بھی انتخابی جمہوریت سے بہتر ہے۔

چینی کمیونسٹ پارٹی کی صد سالہ سالگرہ کے موقع پر وزیراعظم عمران خان نے چینی میڈیا کے نمائندوں سے خصوصی گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ چین کے نظام حکومت میں لچک ہے، وہ جب کوئی چیز تبدیل کرنا چاہتے ہیں تو نظام اس کی حمایت کرتا ہے، لیکن ہمارے معاشرے میں کسی نظام میں تبدیلی بہت مشکل ہے کیونکہ آپ بہت سی قانونی رکاوٹوں میں پھنس جاتے ہیں اور جمہوریت آپ کو جکڑ لیتی ہے، آپ ہمیشہ وہ نہیں کرسکتے جو معاشرے کے لیے بہتر ہو، کمیونسٹ پارٹی کا ٹیلنٹ کو ڈھونڈنے اور اس کی تربیت کرنے کا نظام کسی بھی انتخابی جمہوریت سے بہتر ہے،

عمران خان نے کہا کہ ہمیں اب تک یہ بتایا گیا تھا کہ مغربی جمہوریت کسی بھی معاشرے کی ترقی کا بہترین نظام ہے لیکن چینی کمیونسٹ پارٹی (سی پی سی) ایک منفرد ماڈل ہے اوراس سے خطے کوفائدہ ہوگا، سی پی سی نے ایک ایسا متبادل نظام دیا جس نے تمام مغربی جمہوریتوں کومات دی، انہوں نے میرٹ کو فروغ دیا

کمیونسٹ پارٹی کی کامیابی طویل مدت منصوبہ بندی ہے، انتخابی جمہوریت میں صرف 5 سال کی منصوبہ بندی کی جاتی ہے۔ اب تک یہ خیال تھا کہ انتخابی جمہوریت میں میرٹ پر حکمران منتخب ہوتے ہیں اور ان کا احتساب بھی ہوسکتا ہے لیکن کمیونسٹ پارٹی نے انتخابی جمہوریت کے بغیر ہی اس کے تمام مقاصد زیادہ بہتر طور پر حاصل کیے۔

عمران خان کا کہنا تھا کہ چینی صدرکی انسدادبدعنوانی کیخلاف مہم انتہائی موثرہے، پاکستان بھی کرپشن کے خلاف اقدامات کے لیے پرعزم ہے، کرپشن سے ایلیٹ طبقہ فائدہ حاصل کرتاہے اور غریب متاثر ہوتاہے، چین نے غربت سے جس طرح اپنی عوام کو نکالا وہ حکمت عملی قابل تعریف ہے، جس معاشرے میں حکمران طبقے کا احتساب ہو وہ کامیاب ہوتا ہے۔

وزیراعظم نے کہا کہ خطے میں امریکا اور چین کے درمیان طاقت کا تنازع جاری ہے، دونوں ممالک کے اختلافات سے پیچیدگیاں پیدا ہوتی ہیں جس سے مسائل جنم لیتے ہیں، امریکا خطے میں اتحاد بنارہا ہے جس میں بھارت اور چند دیگر ممالک شامل ہیں، یہ ٹھیک نہیں کہ امریکا اور دیگر مغربی طاقتیں ہمیں کسی ایک گروپ کا ساتھ دینے پر مجبور کریں، پاکستان پر جتنا بھی دباو¿ آئے گا ہم چین کے ساتھ تعلقات کو کم یا تبدیل نہیں کریں گے۔

عمران خان نے سوال اٹھایا کہ ہم تعلقات میں جانبداری کامظاہرہ کیوں کریں ، ہم سب سے اچھے تعلقات چاہتے ہیں، لہذا کچھ بھی ہوجائے اور چاہے جتنا بھی دباو¿ ہو پاک چین تعلقات تبدیل نہیں ہوں گے، دونوں ممالک کے تجارتی تعلقات بہت اچھے ہیں اور سیاسی تعلقات بہت مضبوط ہیں، ہر بین الاقوامی فورم پر پاکستان چین ہمیشہ ایک ساتھ کھڑے ہوتے ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں