97

سی پیک پاکستان میں ٹرانسمیشن نیٹ ورک وولٹیج بڑھانے میں معاون ہے،چینی ماہر

اسلام آباد(نیوزمارٹ ڈیسک):چینی اکیڈمی برائے ماحولیاتی منصوبہ بندی کے ماہر لی یو نے کہا ہے کہ ٹرانسمیشن نیٹ ورک وولٹیج میں اضافے سے پاکستان میں الیکٹرک لاسز میں کمی ہوسکتی ہے ، بجلی کی پیداوار کی پیمائش اور اس میں سرمایہ کاری کے لئے بہتر منافع کو یقینی بنانے کیلئے چین کا سٹیٹ گرڈ قابل تجدید توانائی ذرائع سے بجلی حاصل کرنے کو ترجیح دیتا ہے۔

چینی اکیڈمی برائے ماحولیاتی منصوبہ بندی کے ماہر لی یو نے نشاندہی کی کہ حکومتی سطح پر چین نے قابل تجدید توانائی قانون وضع کیا ہے ، جس نے قابل تجدید توانائی کی ترقی کے لئے ایک مستند قانونی بنیاد رکھی ہے۔

لی نے کہا بجلی کی پیداوار کی پیمائش اور اس میں سرمایہ کاری کے لئے بہتر منافع کو یقینی بنانے کیلئے چین کا سٹیٹ گرڈ قابل تجدید توانائی ذرائع سے بجلی حاصل کرنے کو ترجیح دیتا ہے۔ لی نے بتایا کہ قیمت کے لحاظ سے چین نے قابل تجدید توانائی جیسے ونڈ پاور اور ہائیڈرو پاور کے لئے ترجیحی رعایتی قیمت مقرر کی ہے،

اس کے علاوہ سرمایہ کاری سے منافع کو بہتر بنانے کے لئے آف شور ونڈ پاور جیسے زیادہ لاگت کی تعمیر پر سبسڈی دی گئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ قابل تجدید توانائی ٹرانسمیشن چینلز کی تعمیر کے عمل میں ، اس کے نیٹ ورک کا کچھ حصہ سوسائٹی کے لئے کھلا ہوا ہے تاکہ اس طرح کی سرمایہ کاری داخل ہوسکے ، ترقی کر سکے اور اچھا منافع حاصل کرسکے۔

پاکستان میں بجلی کی ترسیل اور تقسیم کے نقصانات کی شرح بہت زیادہ ہے۔ اس حوالے سے لی نے تعارف کرایا کہ چین کی پاور گرڈ تنظیم کی اپنی خصوصیات ہیں ، یہ بہت مربوط ہے۔ اس بنیاد پر جب بوجھ کم ہوجاتا ہے ہم کوشش کرتے ہیں کہ لائن پر بجلی کی ترسیل کم ہوجائے۔ جب بوجھ بڑھ جائے گا ، ہم موجودہ ٹرانسمیشن میں اضافہ کریں گے ، اس طرح کے لچکدار ضابطے سے بجلی کے نقصان کو کم کرنے میں مدد ملتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ پورے ٹرانسمیشن نیٹ ورک کی وولٹیج میں اضافہ ، تزئین اور ٹرانسفارمر جیسے بنیادی اجزاءکی تبدیلی کی سطح کو کم کرنے اور لازمی اجزا سے بجلی کے نقصانات کو کم کیا جاسکتا ہے۔لی یو نے بتایا کہ توانائی کی کھپت کو کم کرنے اور کارکردگی کو بہتر بنانے کے لئے وزارت ماحولیات ،

ترقی و اصلاحات کمیشن ، وزارت ٹرانسپورٹ اور دیگر محکموں کو مل کر کام کرنے کی ضرورت ہے۔ حکومت کو ہر سطح پر تعاون اور پورے معاشرے کی شمولیت کو فعال طور پر متحرک کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے یہ نتیجہ اخذ کیا آخر کار نئی صنعتیں پرانی کی جگہ لے لیں گی اور معاشرتی اخراجات بھی نئی صنعتوں کی محرک قوت میں تبدیل ہوجائیں گی ، جو پورے معاشرے کو آگے لے جائے گی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں