14

نیٹو اور روس کے درمیان یوکرین کے مسئلے پر منعقدہ اجلاس بے نتیجہ ختم

نیٹو اور روس کے درمیان یوکرین کے مسئلے پر منعقد ہونے والا اجلاس بےنتیجہ ختم ہوگیا۔ اس حوالے سے نیٹو ہیڈ کوارٹرز برسلز میں منعقد والے نیٹو رشیا کونسل کے اجلاس میں دونوں فریقین نے اپنا اپنا سابقہ موقف ہی دہرایا۔

روس نے اس اجلاس میں اپنا یہ موقف دہرایا کہ نیٹو نئے ممبر نہ بنائے اور اس کے مشرقی ممالک سے اتحادی افواج نکل جائیں جبکہ نیٹو نے کہا کہ وہ اپنی اوپن ڈور پالیسی برقرار رکھے گا۔

اس کے ساتھ ہی نیٹو نے روس پر مزید واضح کیا کہ ہر ملک کو یہ حق حاصل ہونا چاہیے کہ وہ اپنے تحفظ کیلئے کون سی سیکیورٹی پالیسی اختیار کرتا اور کس کو اپنا دوست چنتا ہے۔

دوسری جانب اجلاس کے بعد پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے نیٹو کے سیکرٹری جنرل جین اسٹولٹنبرگ نے کہا کہ دونوں فریقین کے درمیان 2 سال کے بعد یہ ملاقات ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ یوکرین اور یورپین سیکیورٹی کے مسئلے پر روس کے ساتھ ہماری سنجیدہ اور براہ راست گفتگو ہوئی ہے۔

ان کا مزید کہنا تھا کہ یہ کوئی آسان گفتگو نہیں تھی کیونکہ نیٹو اتحادیوں اور روس کے درمیان ان مسائل پر نمایاں اختلافات ہیں۔

نیٹو چیف کے مطابق اس اجلاس میں دونوں فریقین نے برسلز اور ماسکو میں اپنے دفاتر دوبارہ قائم کرنے کے امکان پر گفتگو کے علاوہ بات چیت کو جاری رکھنے، فوجی مشقوں کیلئے شفافیت کو بڑھانے، خطرناک فوجی واقعات کو روکنے، سائبر خطرات کو کم کرنے، ہتھیاروں کے کنٹرول و عدم پھیلاؤ، تخفیف اسلحہ، میزائلوں پر باہمی حدود کو دور کرنے سمیت فوجی مواصلاتی چینلز کو بہتر بنانے کے طریقوں پر تفصیلی تبادلہ خیال کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں