14

دبئی میں کار فضا میں اڑنے لگی (ویڈیو)

دبئی: سائنس فکشن جیسی اڑن کار نے دبئی میں کامیاب آزمائشی پرواز کی ہے۔

تفصیلات کے مطابق اندرون شہر کے سفر کے لیے تیار کردہ مستقبل کی اڑنے والی ‘ہائپر کار’ جو 3 ہزار فٹ کی بلندی پر 135 میل فی گھنٹہ کی رفتار تک پہنچ سکتی ہے، نے دبئی میں کامیاب آزمائشی پرواز مکمل کر لی ہے۔
یہ اڑن کار لندن میں قائم اسٹارٹ اَپ (نئی کمپنی) بیلویدر انڈسٹریز نے بنائی ہے، اس مکمل الیکٹرک Volar eVTOL پروٹوٹائپ نے اپنی آزمائشی پرواز نومبر میں مکمل کی تھی، تاہم کمپنی نے دو دن قبل اس ٹیسٹ کی فوٹیج جاری کی ہے۔
ایک مرتبہ چارج ہونے کے بعد یہ ڈیڑھ گھنٹے تک پرواز کر سکے گی، کمپنی نے اس کی کوئی قیمت نہیں بتائی ہے لیکن اتنا ضرور بتایا ہے کہ تجارتی تیاری 2028 میں شروع ہو جائے گی۔
تکنیکی طور پر وولر ملٹی کاپٹر سواری ہے جس کے پنکھے اس کے ڈیزائن کے اندر چھپائے گئے ہیں، لیکن اس میں اضافی پروپلشن کا معلوم نہیں ہو سکا ہے، تاہم ڈیزائن سے دو دو نشستی اڑن کار ہے، کمپنی کے مطاق اگلے ڈیزائن میں چار سے پانچ افراد بیٹھ سکیں گے۔
اس کار کو دیکھ کر ایسا لگتا ہے جیسے یہ بیٹ مین کی گاڑی ہو، تاہم جدید ترین ڈیزائن کی یہ کار رن وے کے بغیر سیدھا اوپر اٹھنے والی کار ہے۔ کمپنی کا کہنا ہے کہ اس فیوچرسٹک کار نے 40 کلومیٹر فی گھنٹہ (25 میل فی گھنٹہ) کی رفتار کے ساتھ 13 فٹ (4 میٹر) کی بلندی پر پرواز کی، چوں کہ یہ ماڈل ہے تو اسے اصل کار کی جسامت سے آدھے سائز پر تیار کیا گیا ہے۔
یہ فلائنگ کار پروٹوٹائپ نجی کار مالکان کے لیے کاروں کے متبادل کے طور پر ڈیزائن کیا گیا ہے، تاکہ سائیکل سواروں اور پیدل چلنے والوں کے لیے زمین پر جگہ خالی رہے اور سڑکوں پر بھیڑ کم ہو، تاہم مستقبل میں یہ اوبر کی طرح آن ڈیمانڈ ٹرانسپورٹ بھی فراہم کر سکے گی۔
ماحول دوست، برق رفتار اور بے آواز وولر کار مکمل طور پر برقی توانائی سے چلتی اور پرواز کرتی ہے، آٹو موبائل تجزیہ کار ماہرین نے اس کی ڈیزائننگ، افادیت اور کارکردگی کو متاثرکن اور امید افزا قرار دیا ہے۔ ویڈیو میں اسے اوپر اٹھتے دیکھا جا سکتا ہے لیکن یہ ہوا میں سیدھی رہنے کی بجائے ادھر ادھر ڈولتی دکھائی دیتی ہے، اس خامی کو شاید اگلے مراحل میں دور کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں